آئینہ کے رکن بنیں ؞؞؞؞؞؞؞ اپنی تخلیقات ہمیں ارسال کریں ؞؞؞؞؞s؞؞s؞؞ ٓآئینہ میں اشتہارات دینے کے لئے رابطہ کریں ؞؞؞؞؞؞؞؞؞ اس بلاگ میں شامل مشمولات کے حوالہ سے شائع کی جاسکتی ہیں۔

Saturday, July 14, 2018

یا رب بس است مارا ایک دلربا محمد


نعت

از:  مولانا شاہ وصی احمد نعمتی پھلواروی
ترجمہ: حضرت مولانا شاہ ہلال احمد قادری پھلواروی

یا رب بس است مارا ایک دلربا محمد               صل علی محمد صل علی محمد
(۱)اے رب ہمارے لیے ایک ہی دلربا محمد کافی ہیں صل علی محمد صل علی محمد

برماوجملہ عالم رحمت بودچوذاتش                    ارحم علی محمدارحم علی محمد
(۲)ہم پر اور تمام عالم پر ان کی ذات رحمت ہے اے اللہ محمد پر رحم کر اے اللہ محمد پر رحم فرما

چوں او سلام خواندہ برما تو نیزاے دل                    سلم علی محمد سلم علی محمد
(۳) جب انہوں نے(یعنی رسالت مآب  صلی  اللہ علیہ وسلم نے) ہم پر سلام بھیجا  ہے تو اے دل تو  بھی سلام بھیج محمد پر  تو  بھی سلام بھیج محمد

اے دل اگر تو خواہی بینی جمال مطلق                    انظر الی محمد انظرالی محمد
(۴)اے دل اگر تو جمال مطلق (یعنی جمال الٰہی )دیکھنا چاہتا ہے تو دیکھ محمد  کو دیکھ محمد محمد کو

در وصف او چہ خوانم از نور اوچہ گویم                    شمس الضحی محمد  شمس الضحی محمد
(۵) ان کی تعریف میں میں کیا کہوں   ان کے نور کے بارے میں کیا بولوں؟ محمد تو شمس الضحی  ہیں (چڑھتے دن کا سورج جو بلند کی طرف مائل رہتا ہو )محمد تو شمس الضحی

خوش آنکہ بردر  او خوانم چوبے نوایاں                  یا  مصطفی محمد یا  مصطفی محمد
(۶) کتنا اچھا ہوتا کے انکے در پر میں بینواو کی طرح صدا لگاتا اے مصطفی ٰمحمد اے مصطفیٰ محمد

خوش دعوتے نمودی اے صد چومن فدایت                 لبیک یا محمد لبیک یا محمد
(۷) کتنی اچھی دعوت دی آپنے اے وہ کے جیسے سینکڑوں آپ پر فدا ہوں (یعنی دعوت  دین حق ) میں حاضر ہوں اے محمد  میں حاضر ہوں اے محمد (یعنی میں آپ کی  دعوت حق پر لبیک کہتا ہوں اس کو قبول کرتا ہوں )

یا رب زناب پاکش ہر جاوصی سخن زد                   صل علی محمد صل علی محمد
 (۸) اے رب وصی ہر جگہ ان  کے نام  سے سخن طرازی کرتا ہے  اے اللہ حضرت سیدنا محمد  پر درود بھیج اے اللہ حضرت سیدنا محمد  پر درود بھیج

Sunday, July 1, 2018

خود نمائی ۔۔۔۔۔۔ شاہ ہلال احمد قادری


حضرت مولانا سید شاہ ہلال احمد قادری پھلواروی مدظلہ العالی کی ایک بے باک نظم قارئین آئینہ کی نذر۔



خوش خبری