آئینہ کے رکن بنیں ؞؞؞؞؞؞؞ اپنی تخلیقات ہمیں ارسال کریں ؞؞؞؞؞s؞؞s؞؞ ٓآئینہ میں اشتہارات دینے کے لئے رابطہ کریں ؞؞؞؞؞؞؞؞؞ اس بلاگ میں شامل مشمولات کے حوالہ سے شائع کی جاسکتی ہیں۔

Friday, 21 February 2014

کیا هندوستانی راج مستری کسی سے کم ہیں!


 یہ ہیں سورج پور،  دیوریا کے شہری رادهے شیام یادو ، پیشے سے راج مستری ، اور یہ ماہر ہیں بلڈنگ لفٹنگ تکنیک کے.  ان کا نیا کارنامہ ہے اندر کمار جالان کے دو منزلہ مکان کو سڑک سے چار فٹ اوپر اٹھانا جسکے بعد ان کا مکان سڑک کے پانی سے محفوظ  ہو گیا. جالان  کا مکان  غلہ منڈی، رستم پور میں ہے. اس مکان کو اٹھا نے میں چار سو جیک  اور پچیس مزدور لگے ہیں.  رادهے شیام جی کا کہنا ہے کہ انہوں نے یہ تکنیک  اپنے چچا مان چند سے سیکهی ہے، جنہوں نے سب سے پہلے یہ کام ہریانہ کے جمنا نگر میں شروع  کیا. گورکھپور سمیت پوروانچل میں اب تک اس تکنیک سے وہ سو سے زیادہ مکان اوپر اٹھا چکے ہیں. اس تکنیک میں مکان کو  تین فٹ تک اوپر اٹھانے میں 150 روپئے فی مربع فٹ خرچ آتا ہے.
 آخر وہ کرتے کیا ہیں جسے دیکھ کر بڑے بڑے قابل انجینئر بهی حیران رہجائیں . اس تکنیک میں سب سے پہلے  مکان کی بنیاد کے قریب  یہاں وہاں تین سے چار فٹ گہرا گڑھا کهودا جاتا ہے. پهر بنیاد کی دیوار کو کئی جگہوں سے کهول کر اس میں جیک لگایا جا تا ہے، چونکہ مکان کا وزن زیادہ ہوتا ہے اس وجہ سے گھر کے نیچے لوہے کے اینگل کا جال بچھا یا جاتا ہے جسکا وزن جیک پر ہوتا ہے . پهر مکان میں لگے سبھی جیک کو ایک ایک سنٹی میٹر کر کے برابر سے اٹھا یا جاتا ہے. ایک اونچائ تک اٹهنے کے بعد خالی جگہوں پر اینٹ کی جوڑائی کر مکان کا وزن بنیاد پر لے لیا  جاتا ہے پهر اینگل اور  جیک نکال کر باقی جگہوں کو بھی اینٹ سے بند کر دیا جاتا ہے، لیجیے مکان اونچا ہو گیا. اور حیران نہ ہوں اس تکنیک سے مکان  کو کهسکا یا بهی جا سکتا ہے۔

0 comments:

Post a comment

خوش خبری