آئینہ کے رکن بنیں ؞؞؞؞؞؞؞ اپنی تخلیقات ہمیں ارسال کریں ؞؞؞؞؞s؞؞s؞؞ ٓآئینہ میں اشتہارات دینے کے لئے رابطہ کریں ؞؞؞؞؞؞؞؞؞ اس بلاگ میں شامل مشمولات کے حوالہ سے شائع کی جاسکتی ہیں۔

Wednesday, 22 April 2020

Reech Ka Bachcha - Nazeer Akbarabadi

ریچھ کا بچّہ
نظیر اکبر آبادی
کل راہ میں جاتے جو ملا ریچھ کا  بچّہ
 لے آئےو ہیں ہم بھی اٹھا ریچھ کا بچّہ
سو نعمتیں کھا کھا کے پلا ریچھ کا  بچّہ
جس وقت بڑھا ریچھ ہوا ریچھ کا بچّہ
 جب ہم بھی چلے ساتھ چلا ریچھ کا  بچّہ
تھا ہاتھ میں اک اپنے سوا من کا جو سوٹا
 لوہے کی کڑی جس پر کھٹکتی تھی سراپا
کاندھے پر چڑھا جھولنا اور ہاتھ میں پیالا
 بازار میں لے آئے دکھانے کو تماشا
آگے تو ہم اور پیچھے وہ تھاریچھ کا  بچّہ
کہتا تھا کوئی ہم سے میاں آؤ مچھندر
وہ کیا ہوئے اگلے جو تمہارے تھے وہ بندر
ہم ان سے یہ کہتے تھے یہ پیشہ ہے قلندر
ہاں چھوڑ دیا با با انہیں جنگلے کے اندر
جس دن سے خدا نے یہ دیاریچھ کا  بچّہ
مدّت  میں اب اس بچے کو ہم نے ہےسدھایا
 لڑنے کے سوا ناچ بھی اس کو ہے سکھایا
یہ کہہ کے جو ڈھپلی کے تئیں گت پہ بجایا
اس ڈھب سے اسے چوک کے جمگھٹ میں نچایا
جو سب کی نگاہوں میں کھپا ریچھ کا  بچّہ
جب ہم نے اٹھا ہاتھ کڑوں کو جو ہلایا 
خم ٹھونک پہلواں کی طرح سامنے آیا
لپٹا ##تو یہ کُشتی## کا # ہنر##آن دکھایا
 جو چھوٹے بڑے جتنے تھے ان سب کو رجھایا
ہم بھی نہ تھکے اور نہ تھکا ریچھ کا  بچّہ
 جب کُشتی کی ٹھہری تو وہیں سرکو جو جھاڑا
 للکارتے ہی اس نے ہمیں آن لتھاڑا
گہ ہم نے پچھاڑا اسے گہ اس نے پچھاڑا
 اک ڈیڑھ پہر ہوگیا کُشتی کا اکھاڑا
گر ہم بھی نہ ہارے نہ ہٹا ریچھ کا بچّہ
 کہتا تھا کھڑا کوئی جو کرآه، اہاہا ! 
اس کے تمہیں استاد ہو واللہ، اہاہا !
یہ سحر کیا تم نے تو ناگاه اہاہا !
 کیا کہئے غرض آخرش اے واہ اہاہا ! 
ایسا تو نہ دیکھا نہ سنا ریچھ کا بچّہ
آئینۂ اطفال میں اور بھی بہت کچھ

0 comments:

Post a comment

خوش خبری