آئینہ کے رکن بنیں ؞؞؞؞؞؞؞ اپنی تخلیقات ہمیں ارسال کریں ؞؞؞؞؞s؞؞s؞؞ ٓآئینہ میں اشتہارات دینے کے لئے رابطہ کریں ؞؞؞؞؞؞؞؞؞ اس بلاگ میں شامل مشمولات کے حوالہ سے شائع کی جاسکتی ہیں۔

Saturday, 25 April 2020

Subah Ki Hawakhori -Mohammad Husain Azad

صبح کی ہوا خوری
محمد حسین آزاد

 صبح کا وقت ہے۔
جی خوش ہے۔
 آؤ! ذرا باغ چلیں ۔ ہوا کھائیں -
آہا ؟ کیا ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا چل رہی ہے ! رنگ برنگ کے پھول کھلے ہوئے ہیں -
باغ مہک رہا ہے ۔ آتے ہي دل باغ باغ ہوگیا۔
 ذرا ہریاول کو دیکھنا! آنکھوں میں طراوت آتی ہے!
 ہری ہری گھاس کیا ہے ؟
 سبز مخمل کا فرش بچھ رہا ہے ۔ اس پر اوس کے قطرے پڑے ہیں، گو یا مخمل پر موتی جڑے ہیں ۔
درختوں پر کچھ اور ہی بہار ہے. کسی میں پھل لگا ہے . ڈالیاں جھوم رہی ہیں ۔
کنواں چل رہا ہے .
ایک چھوٹا سا لڑکا بھی پاس کھڑا ہے۔ تماشا دیکھ رہا ہے ۔
 دوسرا بڑا شوقین. ہاتھ میں کتاب ہے۔ سبق یاد کر رہا ہے .
یہ مالی کیا کرتا ہے؟ پودا لگاتا ہے.
چلو! سیر دیکھیں ۔
بڑے میاں! یہ پودا کہاں سے لائے ہو؟
 صاحب زادے ! بادشاہی باغ سے لایا ہوں ۔
کتنے دنوں میں جم جائے گا؟۔ جلدی پهوٹ آئے گا ۔
 گھڑے میں کیا ہے؟
 پانی ہے۔ کیا کرو گے؟
پودے میں دوں گا ۔ اس سے جلدی ہرا بھرا ہو جاۓ گا۔


ہریاول: ہریالی / سبزی / سبزہ / طراوت / تازگی
سبزہ زار / چراگاہ / مرغزار


آئینۂ اطفال میں اور بھی بہت کچھ

0 comments:

Post a comment

خوش خبری