آئینہ کے رکن بنیں ؞؞؞؞؞؞؞ اپنی تخلیقات ہمیں ارسال کریں ؞؞؞؞؞s؞؞s؞؞ ٓآئینہ میں اشتہارات دینے کے لئے رابطہ کریں ؞؞؞؞؞؞؞؞؞ اس بلاگ میں شامل مشمولات کے حوالہ سے شائع کی جاسکتی ہیں۔

Thursday, 24 September 2020

Ghazaliyaat e Wali For MA Jamia Millia Islamia

 غزل 
ولی محمد ولی
تجھ لب کی صفت لعل بدخشاں سوں کہوں گا 
جادو ہیں ترے نین غزالاں سوں کہوں گا 
دی بادشہی حق نے تجھے حسن نگر کی 
یو کشور ایراں میں سلیماں سوں کہوں گا 
تعریف ترے قد کی الف وار سری جن 
جا سرو گلستاں کوں خوش الحاں سوں کہوں گا 
مجھ پر نہ کرو ظلم تم اے لیلی خوباں 
مجنوں ہوں ترے غم کوں بیاباں سوں کہوں گا 
دیکھا ہوں تجھے خواب میں اے مایۂ خوبی 
اس خواب کو جا یوسف کنعاں سوں کہوں گا 
جلتا ہوں شب و روز ترے غم میں اے ساجن 
یہ سوز ترا مشعل سوزاں سوں کہوں گا 
یک نقطہ ترے صفحۂ رخ پر نہیں بے جا 
اس مکھ کو ترے صفحۂ قرآں سوں کہوں گا 
قربان پری مکھ پہ ہوئی چوب سی جل کر 
یہ بات عجائب مہ تاباں سوں کہوں گا 
بے صبر نہ ہو اے ولیؔ اس درد سوں ہرگز 
جلتا ہوں ترے درد میں درماں سوں کہوں گا
 غزل 
ولی محمد ولی
ہوا ہے سیر کا مشتاق بے تابی سوں من میرا
چمن میں آج آیا ہے مگر گل پیرہن میرا
میرے دل کی تجلی کیوں رہے پوشیدہ مجلس میں
ضعیفی سوں ہوا ہے پردہ فانوس تن میرا
نہیں ہے شوق مجھ کو باغ کی گل گشت کا ہرگز
ہوا ہے جلوہ گرد اغا ں سوں سینے کا چمن میرا 
موا ہوں تجھ جدائی کے دکھوں اے نورعین دل
بر نگ مردمک انکھیاں کا پردہ ہے کفن میرا
 لگے پھیکی نظر میں اے ولی دکان حلوائی
اگر ہو جلوہ گر  بازار میں شیریں بچن میرا
غزل
ولی محمد ولی
یاد کرنا ہر گھڑی اس یار کا 
ہے وظیفہ مجھ دل بیمار کا 
آرزوئے چشمۂ کوثر نہیں 
تشنہ لب ہوں شربت دیدار کا 
عاقبت کیا ہووے گا معلوم نئیں 
دل ہوا ہے مبتلا دل دار کا 
کیا کہے تعریف دل ہے بے نظیر 
حرف حرف اس مخزن اسرار کا 
گر ہوا ہے طالب آزادگی 
بند مت ہو سبحہ و زنار کا 
مسند گل منزل شبنم ہوئی 
دیکھ رتبہ دیدۂ بیدار کا 
اے ولیؔ ہونا سریجن پر نثار 
مدعا ہے چشم گوہر بار کا

0 comments:

Post a comment

خوش خبری